in , ,

“بٹہ مالو بس سٹینڈ کی پارمپورہ منتقلی کی وجہ سے تاجروں کو سالانہ 2500کروڑ کا خسارہ”

زراعت ٹائمز نیوز

سرینگر/18نومبر//بٹہ مالو بس سٹینڈ کو پارمپورہ منتقل کرنے کی وجہ سے بٹہ مالو میں تاجروں کو 2500کروڑ روپے سالانہ نقصان اُٹھانا پڑرہا ہے جبکہ بس اڈہ کی منتقلی کی وجہ سے 75ہزار افراد بے روزگار ہوچکے ہیں جن سے منسلک ہزاروں کنبے اور لاکھوں لوگ متاثر ہوچکے ہیں ۔ یہ ایک انسانی مسئلہ پیدا ہوا ہے جس کو
.فوری طور پر حل کرنے کی ضرورت ہے
اس ضمن میں بٹہ مالو ٹریڈرس فیڈریشن
نے لیفٹیننٹ گورنر ، وزیر داخلہ امت شاہ اور عدالت عالیہ سے اپیل کی ہے کہ وہ اس معاملے میں مداخلت کرکے بس سٹینڈ کو اپنی جگہ دوبارہ بحال کرنے کےلئے اقدامات اُٹھائیں۔بٹہ مالو ٹریڈرس ایسوسی ایشن کے پریذیڈنٹ ابرار احمد نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ بس سٹینڈ بٹہ مالو کی پارمپورہ منتقلی سے نہ صرف تاجروں کو نقصان ہورہا ہے بلکہ اس سے دیگر لوگوں کو بھی کافی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔ انہوں کہا کہ حکام نے کہا تھا کہ اس سے ٹریفک کے نظام میں بہتری آئے گی تاہم اس سے ٹریفک پر زیادہ دباﺅ بڑھ گیا ہے کیوںکہ جو لوگ اسلام آباد، شوپیاں، پلوامہ یا یہاں شمالی کشمیر کے کپوارہ، بارہمولہ، سوپور ، ہندوار سے بٹہ مالو کے ایم ڈی گاڑیوں کے ذریعے پہنچتے تھے ان میں پچاس سے زائد مسافر صرف ایک گاڑی میں سفر کرتے تھے لیکن جب سے اڈہ منتقل ہوا ہے لوگ اپنی گاڑیوں میں سرینگر آنے کو ترجیح دیتے ہیں کیوں کہ ان کو دو تین گاڑیاں بدلنی پڑتی ہے اسلئے وہ اپنی گاڑیاں لاتے ہیں جو سرینگر میں ٹریفک کے دباﺅ میں اضافے کا باعث بن گیا ہے ۔ا نہوں نے کہا کہ 52سیٹوں کی گاڑی میں پچاس سے زیادہ لوگ ایک ساتھ یہاں پہنچتے تھے لیکن اب 52نجی گاڑیوں میں شہر آتے ہیں۔ انہوںنے کہا کہ بٹہ مالو بس سٹینڈ کی منتقلی کے نہ صرف عام لوگوں کو پریشانی ہوئی ہے بلکہ مریضوں، عمر رسیدہ افراد ، طلبہ اور ملازمین کو بھی شدید دشواریاں پیش آرہی ہے جو وقت پر
.اپنی منزلوں تک نہیں پہنچ پارہے ہیں
انہوںنے کہا کہ بس ٹینڈ کی منتقلی سے 75ہزار افراد بے روزگار ہوچکے ہیں جبکہ سرکار بے روزگاری کو ختم کرنے کی قسمیں کھارہی ہیں ۔ انہوں نے بتایا کہ یہاں کے تاجروں کو سالانہ 2500کروڑ روپے کا خسارہ برداشت کرنا پڑتا ہے ۔ جبکہ بینکوں سے لیا گیا قرضہ بھی ابھی تک دکانداروں کے سروں پر ہے ۔ انہوںنے بتایا کہ درجنوں شاپنگ کمپلیکس بند ہے جبکہ سینکڑوں کی دکان مقفل ہے ۔ابرار احمد نے کہا کہ اس بس سٹینڈ کی واپس منتقلی کے حوالے سے کئی بار کمشنر سیکریٹری ٹرانسپورٹ، چیف سیکریٹری،ڈویژنل کمشنر اپیل کی گئی اور انہو ں نے بھی اس مسئلے کو ہمدردی کے ساتھ سمجھ لیا لیکن زمینی سطح پر کوئی اقدام نہیں اُٹھایا گیا ۔ اس ضمن میں وزیر داخلہ نے بھی حال ہی میں بتایا ہے کہ بس سٹینڈ کو واپس لایا جائے گا ۔ بٹہ مالو ٹریڈرس ایسوسی ایشن کے پریذیڈنٹ ابرار احمد خان نے اپنے ایک بیان میں عدالت عالیہ ، بی جے پی لیڈر دویندر رینہ اور وزیر داخلہ امت شاہ سے اپیل کی ہے کہ وہ بس سٹینڈ بٹہ مالو کو پھر سے بحال کریں تاکہ متاثرہ افراد کو راحت ملے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Farooq Abdullah resigns as NC President; party issues statement

PHDCCI Jammu team meets Principal Secretary, Industries Dept